Barzakh

آتے جاتے لوگ پوچھتے ہیں حال میرا
کیا بتایں ھوا ہے حال۔۔ بےحال میرا
کیا کہیں کہ سڑک پہ جنازہ روز
گزرتا ہے لاچار میرا
روز کھڑے ھو کہ دیکھتے ہیں اس
امید پہ کہ شائد آج تو وہ آیا ھوگا
یھیں برپا ھہ تماشہ و ملال میرا
کس کس کو جواب دیں اب
کہ ستاے ہوے ھیں ھم
اب تو افسوس بھی نہیں کرتا کوی پرستار میرا
ڈوب گیا ھوگا سورج کہیں
کہیں گریہن ھوتا ھوگا چاند
کچھ یاد نہیں اب
کہ دکھتا تھا کیسا یار میرا
زمانہ لاتعلق ھوگیا بھت
پریشانی نھیں ھے مگر
آتے جاتے کبھی ھم ٹوک لیتے ھیں خود کو
کہ بتاو کیا ھوا ھے حال تیرا

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s